اسلامی تحریک کی گلگت میں اہم پریس کانفرنس، جی بی کو مکمل صوبہ بنانے کا مطالبہ

  • جمعہ, 02 مارچ 2018 16:06

شیعہ نیوز(پاکستانی شیعہ خبررساں ادارہ)اسلامی تحریک پاکستان گلگت بلتستان کے رہنماوں نے کہا ہے کہ وزیراعظم پاکستان اپنے متوقع دورے گلگت کے موقع پر ایک اور لولی پاپ اور لولے لنگھڑے نظام کا اعلان کرنے والے ہیں۔ جس کی ہم ہر سطح پر مخالفت کریں گے۔ جی بی کو دشمن کی سازشوں کے رحم کرم پر چھوڑا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت اپنے زیر قبضہ کشمیر کو اپنا اٹوٹ انگ قرار دے رہا ہے مگر ہمارے حکمران جی بی کو متنازعہ قرار دیکر عوام کی مایوسیوں میں اضافہ کر رہے ہیں۔ گلگت پریس کلب میں پرہجوم پریس کانفرنس کے دوران اسلامی تحریک پاکستان جی بی کے جنرل سیکرٹری علامہ شیخ مرزا علی، سینئر نائب صدر دیدار علی، شیخ منیر حسن، شیخ فدا حسین، علامہ سید اکبر شاہ اور حاجی نثار حسین نے خطاب کیا۔ انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان کو آئین پاکستان میں شامل کرکے مکمل آئینی صوبہ بنایا جائے۔ وفاقی حکومت گلگت بلتستان کے عوام سے مذاق نہ کریں، جی بی کی اہمیت بین الاقوامی سطح پر بہت اہمیت کی حامل بن چکی ہے۔ بھارت مقبوضہ کشمیر کو اپنا حصہ سمجھتی ہے تو پاکستان جی بی کو اپنا حصہ کیوں تسلیم نہیں کرتا ہے۔ اگر جی بی کو کشمیر کے ساتھ نتھی کرنا پاکستان کے مفاد میں ہے تو کشمیر کو حاصل تمام اختیارات کو 70 سالوں سے گلگت بلتستان کو حاصل کیوں نہیں ہوئے۔

پریس کانفرنس میں اسلامی تحریک کے رہنماوں نے کہا کہ وزیراعظم خاقان عباسی کے فیصلے اور سرتاج عزیر کمیٹی کی سفارشات نے جی بی کے عوام کو حیرت میں مبتلاء کیا ہے۔ عوام کا ڈیمانڈ صوبہ سے کم نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان سی پیک کا گیٹ وے ہے جسے ناکام بنانے کے لئے دشمن ممالک ہر قسم کے حربے استعمال کر رہے ہیں۔ پاکستان مسلم لیگ نون آل پارٹیز کانفرنس کے فیصلے اور قانون ساز اسمبلی کی قراردادوں کو پس پشت ڈال کر اسمبلی کی اہمیت کو گھٹا رہی ہے۔ اس وقت پورے خطے کے عوام کی نظریں وزیراعظم پاکستان کے متوقع دورہ جی بی پر مرکوز ہیں۔ ہم امید رکھتے ہیں کہ عوام کے امنگوں کے عین مطابق جی بی کو آئین پاکستان کے زمرے میں شامل کرنے کا اعلان کریں گے۔ اگر عوامی امنگوں کے برخلاف کوئی اعلان کیا گیا تو مایوسی پھیلے گی اور عوامی ردعمل انتہائی سخت ہوسکتا ہے۔ اسلامی تحریک پاکستان کے رہنماوں نے مزید کہا کہ یہ 1947ء والا گلگت بلتستان ہے اور نہ اب یہاں کے عوام کو مختلف پیکیجز کے نام پر مطمئن کیا جاسکتا ہے۔ جی بی کو کھلواڑ نہ بنایا جائے اور یہاں کے عوام کو ان کے امنگوں کے مطابق آئینی اصلاحات کے ذریعہ 70سالہ محرومیوں کو دور کیا جائے۔

Leave a comment

Make sure you enter all the required information, indicated by an asterisk (*). HTML code is not allowed.