شیعہ نیوز(پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ)سامرہ مقدسہ میں دفاع حرم امام حسن عسکری علیہ السلام میں گزشتہ روز 8 نوجوان شھید ہوگئے ، جنہیں رات گئے وادی السلام میں دفن کیا گیا ہے ۔آج اگر ان شہداء کا خون نہ ہوتا تو حرم مولا ؑ کو داعش اپنے قبضے میں لے چکی ہوتی۔ تمام مومنین محبان محمد و آل محمد عليهم السلام سے التماس ہے کہ سورہ فاتحہ پڑھ کر ان شہیدوں کی ارواح مقدس کو ھدیہ کیجئے ۔

شیعہ نیوز(پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ)شامی انسانی حقوق کی تنظیم کا کہنا ہے کہ داعش کے دہشت گرد دیرالزور صوبے کے دریائے فرات کے مشرق میں باقی رہنا چاہتے ہیں جو اب کچھ ہی کیلومیٹر کے دائرے میں محصور ہیں ۔امریکی سربراہی میں داعش مخالف نام نہاد بین الاقوامی اتحاد داعش کے دہشت گردوں کو تسلیم کرنے کے لئے اس علاقے پر بمباری کر رہا ہے لیکن ابھی تک داعش کے دہشت گردوں نے ہتھیار نہیں ڈالیں ہیں بلکہ وہ امریکا سے معاہدہ کرنا چاہتے ہیں اور امریکا کی بھی نظر شام کے بینکوں اور اقتصادی اداروں سے لوٹے گئے سونے اور ڈالروں پر ہے ۔شامی انسانی حقوق کی تنظیم کا دعوی ہے کہ امریکی اتحاد نے مشرقی شام میں موجود داعش کے دہشت گردوں کو 9 فروری تک علاقے سے نکل جانے کی مہلت دی تھی ۔امریکا اور اس کے کچھ اتحادیوں نے دمشق حکومت کی اجازت کے بغیر، دہشت گرد گروہوں سے جنگ کے بہانے اگست 2014 میں شام میں فوجی مداخلت شروع کی تھی ۔شام میں امریکی اتحاد کے فضائی حملوں میں دہشت گرد کم اور عام شہری بڑی تعداد میں ہلاک ہوئے ہیں ۔داعش کا کہنا ہے کہ اس کے پاس جو سونا اور ڈالر ہے، اسے اس نے ماضی میں اپنے زیر کنٹرول والے شام کے متعدد علاقوں سے جمع کیا تھا ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ داعش نے سونے کا ایک حصہ پہلے ہی ترکی منتقل کر دیا تھا اور اب باقی بچے سونے پر امریکا کی نظر ہے ۔ﷰ

 

شیعہ نیوز(پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ)روس نے شام میں عسکریت پسند تنظیم داعش کے خلاف واضح حکمت عملی تیار کرلی، دہشت گردی کے خاتمے کے لیے ہرممکن اقدامات کرنے کا فیصلہ کرلیا۔تفصیلات کے مطابق شمالی شامی صوبے ادلب میں عسکریت پسندوں کے خلاف قائم کردہ اتحاد نے دہشت گردی کے خاتمے کے لیے اقدامات تیز کردیے۔دوسری جانب روسی صدر ولادی میرپیوٹن کا کہنا ہے کہ شمالی شامی صوبے ادلب میں باغیوں کی جانب سے جارحانہ اقدامات کو معاف نہیں کیا جائے گا۔ان کا کہنا تھا کہ ادلب میں غیر عسکری علاقے کا قیام ایک عارضی اقدام تھا، شام سے امریکی فوجی انخلا معاملات کے حل میں موثر ثابت ہوگا۔علاوہ ازیں ترک صدر رجب طیب اردوگان کا کہنا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے شام سے امریکی فوج کے انخلا کا اعلان کیا ہے تاہم اس پر عمل ہوتا نظر نہیں آرہا، ٹرمپ کے اپنے ہی لوگ اس فیصلے کے خلاف ہیں۔روس اور ترکی نے گزشتہ برس شمالی شام میں ایک غیر عسکری علاقے کے قیام پر اتفاق کیا تھا۔افغانستان اور شام سے امریکی فوجی انخلا کا فیصلہ سینیٹ نے مسترد کردیا۔یاد رہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ نے 19 دسمبر کو اعلان کیا تھا کہ ہم نے داعش کو شکست دے دی، اور آئندہ 30 دنوں میں امریکی فورسز شام سے نکل جائیں گی۔شام سے امریکی فوج کے انخلا سے متعلق ٹرمپ کے بیان پر امریکی وزیر دفاع جیمزمیٹس اور دولت اسلامیہ مخالف اتحاد کے خصوصی ایلچی بریٹ میکگرک نے ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔خیال رہے کہ داعش کے خلاف شام میں صدر باراک اوبامہ نے پہلی مرتبہ سنہ 2014 میں فضائی حملوں کا آغاز کیا تھا اور 2015 کے اواخر میں اپنے 50 فوجی بھیج کر باضابطہ شام کی خانہ جنگی میں حصّہ لیا تھا۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ)  جہاد النکاح کی غرض سے شام جانے والی برطانیہ کے سکول بیتھنل گرین کی سابق طالبہ 15سالہ شمیمہ بیگم نے ایک اخبار کو انٹرویو دیتے ہوئے حیرت انگیز انکشافات کیے ہیں۔

شام میںداعشی دہشتگردوں کی جنسی تسکین کیلیے جہاد النکاح نامی حرام کام کی بنیاد رکھی گئی جس کیلیے دنیا بھر سے دوشیزاؤں کو شام پہنچایا گیااور ان کا جنسی استحصال کیا گیا۔انہی میں سے ایک برطانوی لڑکی جس کا نام شمیمہ بیگم ہے سال 2015 میں اپنے سکول کی دو سہیلیوں سمیت جہاد النکاح کیلیے شام جاتی ہے اور ہالینڈ سے آئے ہوئے ایک تکفیری دہشتگرد سے اس کا جہاد النکاح کرادیا جاتاہے۔

نیوز اخبار دی ٹائمز کو انٹرویو دیتے ہوئےداعشی لڑکی شمیمہ بیگم جو اب 19 سال کی ہوچکی ہےنے کہا کہ وہ حاملہ ہے اور برطانیہ واپس آنا چاہتی ہے۔ شمیمہ نے انکشاف کیا کہ اس سے پہلے بھی وہ دو بچوں کو جنم دے چکی ہے ۔شمیمہ نے اخبار کو بتایا کہ اور اس کی سہیلیاں ایک فلائٹ کے ذریعے ترکی پہنچیں جہاں سے انہیں داعش کی نام نہاد خلافت کے مرکز رقہ لے جایا گیا۔ شمیمہ نے انکشاف کیا کہ اس گھر میں دنیا بھر سے دوشیزاؤں کو جہاد النکاح کی غرض سے لایا گیا تھا۔

ہندہ صفت داعشی لڑکی نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ داعشی دہشتگردوں کی جانب سےمعصوم لوگوں کے کاٹے گئے سروں کو دیکھ کر مجھے کوئی پریشانی نہیں ہوتی تھی۔ وہ ایک معمول کے مطابق زندگی تھی۔

واضح رہے کہ اس سے قبل پاکستان کے مختلف علاقوں اور دینی مدارس بالخصو ص جامعہ حفصہ اسلام آباد سے بڑی تعداد میں خوبرو دوشیزائیں جہاد النکاح کے نام پر داعشی دہشتگردوں کی جنسی ہوس پورا کرنے شام جاچکی ہیںجن میں مشہور تکفیری دہشتگرد اورنگزیب فاروقی کی اہلیہ کی شام میں (جہادالنکاح) ناجائز جنسی تعلقات کیلیے شام جانے کی خبریں زبان زد عام رہی ہیں۔

شیعہ نیوز(پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) امریکا کی سرکردگی میں داعش مخالف نام نہاد اتحاد کے جنگی طیاروں نے منگل کی صبح شام کے مشرقی صوبے دیرالزور کے شہر الباغور میں پناہ گزینوں کے ایک کیمپ پر شدید بمباری کی - بتایا جاتا ہے کہ اس کیمپ میں سبھی عام شہری تھے۔ ابھی یہ نہیں معلوم ہوسکا ہے کہ ہلاک ہونے والوں کی تعداد کتنی ہے تاہم مجموعی طور پر ستّر افراد اس بمباری میں ہلاک اور زخمی بتائے گئے ہیں۔امریکا کےجنگی طیاروں نے پیر کو بھی الباغور شہر پربمباری کی تھی جس میں بیس شامی شہری جاں بحق ہوگئے تھے۔ امریکا نے پچھلے برسوں کے دوران دہشت گرد گروہوں کے خلاف کارروائیوں کے بہانے شام اور عراق میں بڑی تعداد میں عام شہریوں کو نشانہ بنایا ہے۔امریکی جنگی طیاروں نے اپنے ان حملوں میں فاسفورس بموں کا بھی استعمال کیا - شام کی حکومت نے اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل کے نام بارہا خط ارسال کرکے شام پر امریکی اتحاد کی جارحیتوں اور بمباریوں کو روکنے کا مطالبہ کیا ہے۔

شیعہ نیوز(پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) شام کی سرکاری خـبر رساں ایجنسی سانا کے مطابق صوبے کے مختلف شہروں میں پچھلے کئی روز سے مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے اور لوگ غیر ملکی فوجیوں کے فوری انخلا کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ جمعے کے روز ہونے والے مظاہروں میں شریک شامی شہریوں نے امریکہ اور دوسرے ملکوں کی فوجیوں کے خلاف مزاحمت کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ شام کی سرزمین پر امریکی اور فرانسیسی فوجیوں کی موجودگی غیر قانونی ہے اور یہ سلسلہ فوری طور ختم ہونا چاہیے۔رقہ کے عوام کا کہنا تھا کہ وہ غیرملکی اور غاصب فوجیوں کے انخلا تک اپنی جدو جہد جاری رکھیں گے۔امریکہ اور فرانس نے نام نہاد داعش مخالف اتحاد کی آڑ میں اپنے سیکڑوں فوجیوں کو غیر قانونی طور پر شام میں تعینات کر رکھا ہے۔ یہ ایسی حالت میں ہے کہ امریکہ اور اس کے اتحادی عراق اور شام میں داعش اور دیگر دہشت گرد گروہوں کے سب سے بڑے حامی شمار ہوتے ہیں۔

شیعہ نیوز(پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ)امریکا نے جنگ زدہ ملک شام سے دہشت گرد تنظیم 'داعش' کے خلاف 100 فیصد کامیابی تک اپنی عسکری کارروائیاں جاری رکھنے کا وعدہ کیا ہے۔فرانسیسی خبر رساں ادارے 'اے ایف پی' کے مطابق واشنگٹن میں مدعو 70 ممالک کے حکام کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ ’متعلقہ فریقین کو داعش کے خلاف مزید تعاون کرنے کی ضرورت ہے، تاہم شام کی تمام ریاستوں سے انتہا پسندی جلد قصہ پارینہ بن جائے گی‘۔واضح رہے کہ گزشتہ برس دسمبر میں ڈونلڈ ٹرمپ نے شام سے تمام 2 ہزار فوجیوں کو واپسی کا حکم دے کر دنیا کو تشویش میں ڈال دیا تھا۔امریکی صدر نے اپنے خطاب میں کہا کہ ’امریکی اتحادی فوجیوں اور کردش فورسز نے داعش سے ’تقریباً تمام ہی ریاستیں آزاد‘ کرالی ہیں، جو شام اور عراق میں خود ساختہ نظام خلافت کے ذریعے حکمرانی کرنا چاہتے تھے۔ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ’داعش کی جنونیت سے وابستہ ہر شخص کو شکست دی جائے گی‘۔کانفرنس کے آغاز میں امریکی سیکریٹری اسٹیٹ مائیک پومپیو نے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے فوجیوں کی واپسی کے فیصلے میں کوئی تبدیلی نہیں ہے، تاہم ہماری عسکری حکمت عملی صرف جنگی نوعیت کی نہیں ہوگی۔انہوں نے کہا کہ ہم ایسے دور میں داخل ہورہے ہیں جہاں دہشت گرد مختلف حصوں میں تقسیم ہو چکے ہیں۔دوسری جانب امریکی حکام نے کہا کہ فوجیوں کی واپسی کا سلسلہ بتدریج شروع کیا جائے گا۔

 

 

شیعہ نیوز  (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ)  وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ملتان میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ دہشتگرد تنظیمیں داعش اور القاعدہ خطے کو غیر مستحکم کرسکتی ہیں۔ اس کے خلاف سب کو مل کر صف آرا ہونا ہوگا۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ القاعدہ اور داعش کے خلاف ہمیں مل کر کام کرنا ہوگا، داعش ایسی قوت ہے، جو خطے کو غیر مستحکم کرسکتی ہے، یہ افغانستان اور شام میں موجود ہے، میں نے چین، روس، امریکا، ایران، عمان سمیت مختلف ممالک کے دورے اور مذاکرات کئے، سب کا اتفاق ہے کہ داعش کو بڑھنا نہیں چاہیئے، اس کے خلاف سب کو مل کر صف آرا ہونا ہوگا۔

واضح رہے کہ شام و عراق میں بدترین شکست کے بعد دہشتگرد تنظیم داعش کے دہشتگرد افغانستان میں پاکستان بارڈر کے قریب جمع ہونا شروع ہوگئے ہیں۔جس کے بارے میں متعدد بار سیکیورٹی ایجنسیاں خبردار کرچکی ہیں اور پاکستان نے بھی اس سلسلےمیں اقدامات شروع کردیے ہیں۔

 

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ)  عراقی فورسز نے وہابی دہشتگردتنظیم داعش کے دہشتگردوں کے قبضے سے بڑی مقدار میں اسلحہ اور بارود برآمد کرلیے ہیں۔

 اطلاعات کے مطابق عراقی فورسز کا داعش دہشت گردوں کے خلاف ملک بھر میں فوجی آپریشن جاری ہے ، فورسز کی تازہ ترین کارروائی میں بغداد کے جنوب میں وہابی دہشت گرد تنظیم داعش کے ایک ٹھکانے سے بڑی مقدار میں ہتھیار برآمد کئے ہیں۔ عراقی فورسز کا ملک بھر میں وہابی دہشت گردوں کے خلاف فوجی آپریشن جاری ہے جس میں اب تک دہشت گردوں کے مختلف ٹھکانوں سے بڑی مقدار میں ہتھیار برآمد کئے گئے ہیں۔

واضح رہے کہ عراق میں بدترین شکست کے بعد داعشی دہشتگرد چھپتے پھر رہے ہیںجبکہ عراقی فورسز نے ملک سے دہشتگردوں کی مکمل صفائی تک آپریشنز جاری رکھنے کا اعلان کیا ہے۔

 

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ)  جنت البقیع ڈھانے والوں کا وارث اور امام مہدی (عج) سے جنگ کا اعلان کرنے والابدمعاش سعودی ولی عہد محمد بن سلمان فروری میں پاکستان کے دورے پر آرہا ہے۔

یاد رہے کہ یہی محمد بن سلمان ہے جس نے شام میں جناب ذینب (س) اور بی بی سکینہ (س) کے روضے پر اور عراق میں نجف و کربلا پر حملے کیلیے  داعشی خوارج کو تیار کروایاجنہوں نے ظلم و ستم کی وہ داستان رقم کی جس کی نظیر نہیں ملتی۔ پاکستان میں بھی لشکر جھنگوی اور سپاہ صحابہ کے دہشتگردوں (جن کے ہاتھوں سینکڑوں عزداروں کو شہید کیا گیا)کی سعودی عرب سے ہونے والی مالی سپورٹ کا ذمہ دار بھی یہی سعودی ولیعہد ہے ۔

حال ہی میں سعودی صحافی جمال خاشقجی کے قتل میں بھی محمد بن سلمان ملوث ہے جس کی تحقیقات کیلیے عالمی سطح پر دبائو ڈالا جارہا ہے مگر تحقیقاتی ٹیموں کو جائے وقوعہ کا معائنہ کرنے کی اجازت نہیں دی جارہی۔