شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) شام کے شمال مشرقی شہر دیر الزور میں سکیورٹی فورسز کی داعش کے خلاف اہم کارروائی، 2 پاکستانیوں سمیت 5 غیر ملکی دہشتگرد گرفتار،زرائع کے مطابق گرفتارداعشی دہشت گردوں میں 2 امریکی جبکہ 1 روسی بھی شامل ہےذرائع کے مطابق خفیہ اداروں کی رپورٹس کے مطابق اس وقت بھی 4 ہزار سے زائدداعشی دہشت گرد شام میں موجود ہیں،تفصیلات کے مطابق مشرق وسطیٰ کے قلب میں شدید دہشت گردی کےشکارملک میںبدنام زمانہ عالمی تکفیری دہشت گرد تنظیم داعش کے خلاف سکیورٹی فورسزکی اہم کاروائی میں مذید2پاکستانی تکفیری دہشت گردگرفتار کرلیئے گئےہیں، 2پاکستانی دہشت گردو ں سمیت 2امریکی اور 1روسی دہشت گردکی گرفتاری بھی عمل میں آئی ہے، اطلاعات کے مطابق گرفتار پاکستانی دہشت گردوں کی شاخت عبدالعظیم راجپوت عمر19برس اور عبدالرحمٰن جٹ عمر48برس کے نام سے ہوئی ہے۔

واضح رہے کہ شام میں بشارالاسد کی عوامی حمایت یافتہ اور منتخب حکومت کے خلاف امریکی ،اسرائیلی اور سعودی ایماءپر تشکیل شدہ عالمی دہشت گردتنظیم داعش نے چند برس قبل دنیا بھرکے 80سے زائد ممالک سے سلفی، وہابی اور تکفیری نظریات کے حامل دہشت گردوں کو شام میں لاکر مسلح دہشت گردکاروائیوں کا آغازکیا تھا جنہوں نے ہزاروں بے گناہ شیعہ سنی مسلمانوں ، مسیحیوں اور دیگر مذاہب کے پیروں کاروں کو بے دردی سے قتل کیا، انبیاء، اولیاءاور صحابہ کرام کے مزارات کو ڈائنامائٹ لگاکر تباہ کیا اور بعد ازاں عراق اور دیگر ممالک میں بھی بربریت کی یہی مثالیں دہرائی گئیں، داعش کی جانب سے بھرتی کیئے گئے افرادمیں ایک بڑی تعدادپاکستان سے تعلق رکھنے والے کالعدم تکفیری دہشت گردجماعت اہل سنت والجماعت (سپاہ صحابہ)، لشکر جھنگوی ، مختلف وہابی مدارس،اور اسلام کا لبادہ اوڑھی نام نہاد(جماعت اسلامی ) کے کارندوں کی بھی شامل ہے، پاکستان سے بھرتی کیئے گئے ان ہزاروں دہشت گردوں میں سے سینکڑوں شامی اتحادی افواج کے ہاتھوں حلب، القصیراوردمشق کے محازوں پر واصل جہنم ہوچکے ہیں جن کی بچی کچی لاشیں گذشتہ سالوں میں مختلف اوقات میں پاکستان لائے جانے کے بھی انکشافات سامنےآچکے ہیں جبکہ ہزاروں کی تعدادمیں داعش میں شامل پاکستانی دہشت گرداس وقت بھی شامی فورسز کی قیدمیں موجود ہیں۔

شیعہ نیوز )پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ( ہنگو میں 6جنوری 2014ءکو ہنگو ابراہیم زئی گورنمنٹ ہائی اسکول کے 400 بچوں کی زندگی بچانے کے لیے اعتزاز حسن نے اپنی جان قربان کردی۔ شہید اعتزاز حسن کی آج چوتھی برسی منائی جارہی ہے، شہید اعتزاز کی جرأت و بہادری پر انہیں سول اعزاز تمغہ شجاعت سے بھی نوازا جاچکا ہے۔

ہنگو کے علاقے ابراہیم زئی سے تعلق رکھنے والے پندرہ سالہ نویں جماعت کے طالبعلم اعتزاز حسن نے اپنی جان کی قربانی دے کر نہ صرف ہائی سکول کے سینکڑوں طلباء کی جان بچائی بلکہ دشمن کے ناپاک ارادے کو بھی خاک میں ملا کر ایک پیغام دیا کہ جب تک ایک بھی محب وطن اس ملک میں موجود ہے دشمن کے سامنے سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح کھڑا رہے گا۔

شہید اعتزاز حسن کی چوتھی برسی کے موقع پر وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے ٹویٹر پر اپنے پیغام میں انہیں خراج تحسین پیش کیا جبکہ پاکستان ٹیلی ویژن چینل پر شہید اعتزاز حسن پر بنائی گئی فلم بھی دکھائی گئی۔

شیعہ نیوز نیٹ ورک شہید اعتزاز حسن اور ملک عزیز کی خاطر جانوں کا نذرانہ پیش کرنے والے تمام شہیدوں کو سلام پیش کرتا ہے۔

شیعہ نیوز )پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ(سید پسند علی رضوی اصغریہ علم و عمل تحریک پاکستان کے پالیسی ساز ادارے مجلس اعلٰی کے نئے صدر منتخب ہوگئے۔

تفصیلات کے مطابق اصغریہ علم و عمل تحریک کے پالیسی ساز ادارے مجلس اعلٰی کا اجلاس سعيد علی پٹھان کی زیر صدارت اقراء قرآن سینٹر حیدرآباد میں منعقد ہوا، جس میں اضلاع اور ڈویژن کی جانب سے منتخب نمائندگان نے شرکت کی، اجلاس میں مجلس اعلٰی کے آئندہ دو سال کیلئے صدر کا انتخاب عمل میں لایا گیا، جس میں اکثریت رائے سے سید پسند علی رضوی نئے صدر منتخب ہوگئے۔ نومنتخب صدر پسند علی رضوی نے سید ریاض حسین شاہ نقوی کو نائب صدر اور شہباز علی چانڈیو کو سیکرٹری منتخب کیا ہے۔ اجلاس میں اصغریہ تحریک کے سالانہ پروگرام کی منظوری لی گئی، جبکہ تحریک کے آئین میں ترامیم کرنے کے حوالے سے کمیٹی تشکیل دی گئی ہے، جس میں سید پسند علی رضوی، سعید پٹھان، اصغریہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن پاکستان کے مرکزی صدر قمر عباس غدیری اور اصغریہ تحریک کے مرکزی صدر محمد عالم ساجدی شامل ہیں۔

اجلاس میں تحریک میں مرکزی شعبہ اصغریہ میڈیا سیل اور مرکزی کابینہ اصغریہ علم و عمل تحریک کی بھی منظوری لی گئی ہے۔۔ واضح رہے کہ اصغریہ تحریک میں مجلس اعلٰی ایک پالیسی ساز ادارہ ہے، جس میں چیئرمین تحریک، مرکزی صدر و نائب صدر اصغریہ تحریک، اصغریہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن پاکستان کے مرکزی صدر رکن ہوتے ہیں، جبکہ باقی اراکین تحریک کے ڈویژن اور اضلاع سے لئے جاتے ہیں۔ مجلس اعلٰی کو تحریک کے سالانہ پروگرام اور مرکزی کابینہ کی منظوری کا اختیار ہوتا ہے، جبکہ آئین میں ترامیم اور پالیسیاں بنانے کا اختیار بھی اسی ادارے کو ہے، مجلس اعلٰی میں صدر، نائب صدر اور سیکریٹری کیلئے الیکشن ہوتے ہیں، منتخب افراد دو سال تک اسی عہدے پر رہ سکتے ہیں۔ مجلس اعلٰی کا اجلاس ہر تین مہینے بعد ہوتا ہے، جبکہ ہنگامی اجلاس کبھی بھی بلایا جا سکتا ہے۔ اجلاس میں تحریک کی فعالیت کیلئے پروگرام ترتیب دیئے گئے۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) صیہونی تجزیہ نگار نے صیہونی حکومت کے فوجی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ صیہونی وزیر اعظم غزہ میں فوجی تصادم سے خوفزدہ ہیں۔

صیہونی اخبار ہارٹس کے فوجی امور کے تجزیہ نگار آموس ہارئیل نے کہا کہ نتن یاہو غزہ کی دلدل میں پھنسنے اور فوجی تصادم کی صورت میں کنٹرول کھو دینے کے اندیشے کی وجہ سے بہت خوفزدہ ہیں ۔

انہوں نے اسرائیل کے بہت ہی قابل اعتماد فوجی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ اسرائیلی وزیر اعظم بنیامن نتن یاہو اس وقت کچھ بہت ہی فوری مسائل کا سامنا کر رہے ہیں جن میں سب سے بڑا مسئلہ غزہ میں فوجی تصادم کی صورت میں کنٹرول اسرائیل کے ہاتھ سے نکل جانے کا اندیشہ ہے ۔انہوں نے بتایا کہ غزہ کی جانب سے مقبوضہ فلسطین پر ہونے والے وسیع میزائل حملے، صیہونی حکومت کے خفیہ شعبے کے اندازے کے بالکل بر خلاف تھے اور اسرائیلی وزیر جنگ اویگڈور لیبرمین نے جنہیں غزہ کی صورت سے نمٹنے کی کوئی امید نہیں ہے اور جن کا یہ خیال ہے کہ غزہ میں جلد ہی جنگ کا آغاز ہو سکتا ہے، اسرائیلی خفیہ ایجنسیوں کی رپورٹوں کے حوالے سے احتمال ظاہر کیا کہ گزشتہ جمعے کو واپسی مارچ کا انعقاد بہت پر امن ہوگا لیکن ہوا اس کے برخلاف ۔

اسرائیلی اخبار ہارٹس کے فوجی امور کے تجزیہ نگار آموس ہارئیل نے کہا کہ گزشتہ  جمعے کو واپسی مارچ کے مظاہروں میں پانچ فلسطینی شہید ہوگئے جس کے بعد رات ہی کو جہاد اسلامی تنظیم نے نقب علاقے میں میزائل فائر کئے ۔ صبح 6 بجے تک اس نے مقبوضہ فلسطین پر 30 میزائل فائر کئے ۔ اس اسرائیلی تجزیہ نگار نے صیہونی فوج کا یہ بے بنیاد دعوی بھی دہرایا کہ جہاد اسلامی کا یہ میزائل حملہ، ایران کے حکم پر کیا گیا ہے ۔

ہارئیل نے صیہونی ذرائع کے حوالے سے یہ اطلاع بھی دی ہے کہ اسرائیل کے وزیر جنگ لیبرمین اور صیہونی حکومت کے سیکورٹی مشیر مئیر شابات کے درمیان بہت زیادہ اختلافات پیدا ہوگئے ہیں ۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) ایران کے دارالحکومت تہران میں حسینیہ امام خمینی (رہ) میں رہبر معظم حضرت آیت اللہ العظمی خامنہ ای کی موجودگی میں مجلس شام غریباں منعقد ہوئی۔ 

مجلس شام غریباں میں عوام کے مختلف طبقات کے علاوہ بعض اعلی سول اور فوجی حکام نے بھی شرکت کی۔ مجلس شام غریباں کا آغاز دعائے توسل سے ہوا اور اس کے بعد حجۃ الاسلام والمسلمین مسعود عالی نے مجلس شام غریباں سے خطاب کیا اور جناب محمد رضا طاہری نے ماتمی نوحہ پیش کیا۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) سعودی اتحادی افواج کے لڑاکا طیاروں نے یمن کے مختلف شہروں پر شدید بمباری کی ہے۔

سعودی اتحادی افواج کے لڑاکا طیاروں نے یمن کے الحدیدہ، صعنا، ریمہ، حجہ اور صعدہ نامی شہروں پر شدید بمباری کی ہے۔

یمنی حکام نے بمباری سےہونے والے نقصانات کے بارے میں کسی قسم کا کوئی بیان جاری نہیں کیا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز بھی سعودی اتحادی جنگی جہازوں نے یمن کے الحدیدہ شہر میں موجود پینے کے پانی کے پلانٹ پر حملہ کرکے تباہ کردیا تھا۔

واضح رہے کہ سعودی عرب نے چھبیس مارچ دوہزار پندرہ سے یمن کو وحشیانہ جارحیت کا نشانہ بنانے کے علاوہ مغربی ایشیا کے اس غریب عرب اسلامی ملک کا زمینی، فضائی اور سمندری محاصرہ بھی کر رکھا ہے۔

یمن کے محاصرے کے نتیجے میں یمن کو دواؤں اور خوراک کی شدید قلت کا سامنا ہے اور اس ملک کے عوام میں مختلف قسم کے امراض پھیل رہے ہیں۔

سعودی حکومت اور اس کے اتحادی، یمنی عوام کی استقامت و پائیداری کی وجہ سے اپنے مقاصد حاصل کرنے میں بری طرح ناکام ہوگئے ہیں۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) کالعدم دہشتگرد جماعت سپاہ صحابہ کے دہشتگرد رہنما اورنگزیب فاروقی کی الیکشن میں نا اہلی کیلیے درخواست سندھ ہائی کورٹ میں جمع کرادی گئی۔

اورنگزیب فاروقی این اے 237 سے الیکشن لڑنے کے لئے کاغذات جمع کرواچکا ہے جو بدقسمتی سے منظور بھی ہوچکے ہیں۔ جس کے خلاف سول سوسائٹی کے راشد رضوی نے سندھ ہائی کورٹ میں نا اہلی کی درخواست جمع کروادی ہے۔

تمام محب وطن پاکستانیوں کی جانب سے سول سوسائٹی کے اس اقدام کو نہ صرف سراہا جارہا ہے بلکہ اس درخواست کی کامیابی کیلیے دعائین بھی کی جارہی ہیں۔

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) باچا خان انٹر نیشنل ایئر پورٹ پر تعینات ایف آئی اے اہلکاروں نے دہشت گردی کی کئی وارداتوں میں انتہائی مطلوب دہشت گرد مولوی بہادر کو گرفتار کرلیا۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق پشاور کے باچا خان ایئر پورٹ پر تعینات ایف آئی اے کے اہلکاروں نے دہشت گردی کی کئی وارداتوں میں انتہائی مطلوب دہشت گرد مولوی بہادر کو گرفتار کرلیا۔ مولوی بہادر نجی ایئر لائن کی پرواز کے ذریعے دبئی فرار ہونے کی کوشش کررہا تھا۔ ایف آئی اے امیگریشن حکام نے ملزم کو گرفتار کرکے سی ٹی ڈی پشاور کے حوالے کر دیا۔

ایف آئی اے حکام کا کہنا ہے کہ مولوی بہادر 2008 سے بنوں کے مختلف علاقوں میں دہشت گردی اور بم دھماکوں کی مختلف وارداتوں میں ملوث تھا، اس کے خلاف تھانہ بنوں کینٹ، میران بنوں اور بکا خیل بنوں پولیس اسٹیشن میں ایف آئی آر درج ہیں۔

* 17 کے قریب ممالک کہ جن کے ساتھ ابھی فرانس بھی شامل ہو چکا ہے انھوں نے حدیدہ سے بارودی سرنگیں ڈی فیوز کرنے کا اعلان کیا. اور جو چھپایا گیا وہ زیادہ بھیانک اور خطرناک تھا یعنی حدیدہ پر نا جائز قبضہ کرنا.

* 18 مصری بحریہ اپنی پوری قوت کے ساتھ بمبارمنٹ کر رہی ہے. اور امریکی اسرائیلی اور عربوں کی فضائیہ فورسسز حدیدہ کو سرنڈر ہونے پر مجبور کرنے کے لئے ہر متحرک چیز کو نشانہ بنا رہی ہیں.

* کرائے کے قاتلوں کی سوڈانی ، اماراتی ، سعودی ، امریکی اور کئی ایک افریقی ممالک کی زمینی فوجیں حملہ آور ہیں.

* مقامی وطن کے غدار بیرونی فنڈد جنوبیین ، شمالیین ، لیبرل ، سلفی ، اصلاحی (اخوان المسلمین) اور کانگرسی سب فورسسز بھی حدیدہ پر قبضہ کرنے کیلئے استعمال ہو رہی ہیں.

* بڑی تعداد میں بکتربند گاڑیاں ، کئی ایک ممالک کے جنگی جہاز اور اپاچی ہیلی کاپٹرز نے علاقے پر سایہ کیا ہوا ہے. اور جنگی بحری بیڑے حدیدہ پر قبضہ کرنے کے لئے ہر اطراف سے پہنچ کر حدیدہ پر قبضہ کرنے کے لئے حملہ آور ہیں.

* حدیدہ کے معرکے کیلئے دسیوں ٹی وی چینلز شبانه روز نشریات چلا رہے ہیں.

* لوگ قبروں سے نکل سے نکل کر اتحادی فورسسز کی مدد کر رہے ہیں جیسے عفاش اپنی قبر سے نکلا ہے.

* حدیدہ کے سقوط کے لئے نفسیاتی جنگ پر بہت زیادہ سرمایہ کاری کی گئی ہے.

* دنیا جہان کی سیٹلائٹس ، جاسوسی طیاروں اور جدید ترین الات کو حدیدہ کی طرف موڑ دیا گیا ہے. تاکہ اس پر قبضہ کر سکیں.

* مشایخ اور بااثر شخصیات کو خریدنے کے لئے بھاری بھرکم مال ودولت کا لالچ دیا گیا تاکہ حدیدہ پر قابض ہو سکیں.

* عایش ، عزان جیسے دیگر بہت سے معروف چہروں سے بھی نقاب الٹ چکا ہے. اور وہ حدیدہبپر قابض ہونے کے لئے حملہ آوروں کا ساتھ دے رہے ہیں .

* عرب لیگ نے اپنے اجلاس میں حدیدہ پر حملے کی حمایت کردی ہے.

* سلامتی کونسل کے متعدد ھنگامی اجلاس بھی حدیدہ پر حملے کی تائید کے لئے منعقد ہوئے ہیں. اور اعلانات کئے ہیں کہ بڑی تعداد میں انسانی جانوں کو خطرہ لاحق ہے. یعنی لوگ حدیدہ چھوڑ کر نکل جائیں اور شہر دشمن کے حوالے کر دیں. یہ سب کچھ جس کا ذکر ہوا ایک براعظم کے سقوط یا ایک ملک جیسے 20 دم ن میں عراق نے سقوط کیا تھا اس کے لئے کافی تھا. لیکن تمام تر حیلوں اور طاقت کے استعمال کے باوجود ساحلی ضلع پر قبضہ نہ کر سکے. حالانکہ عسکری طور پر اسے سقوط کر جانا چاہئے تھا. اس کے بعد انکا قبضہ کرنے کے خواب کا دائرہ تنگ ہوا تو ائر پورٹ پر قبضہ انکا ھدف قرار پایا. اب انکی فقط یہ حسرت ہے ایک ائر پورٹ پر ایک فوٹو بنا لیں. 
آخر دشمن اتنا عاجز اور ذلیل کیوں نظر آ رھا ہے. متعدد ممالک اور انکی مشترکہ فورسسز ، جدید ترین اسلحہ اور اسلحہ واموال کی بھرمار کے باوجود ذلت ورسوائی کے ساتھ عاجز ہیں. 
خدا کی قسم اور پھر خدا کی قسم اگر پا پیادہ لوگ جنگی طیاروں سے روپوش ہو سکتے اور دشمن کے پاس باقی ساری طاقت ہوتی تو پھر بھی وہ جنوب کے کئی ایک اضلاع اور عدن سمیت کئی ایک شہروں پر چند دنوں میں کنٹرول کر چکے ہوتے .

ابھی تک تو حدیدہ کا معرکہ ہے اور اتنے عاجز وبے بس ہیں. عثمانی سلطنت نے ایک دن میں قبضہ کیا تھا اور.1962 میں مصر نے چند گھنٹوں میں قبضہ کر لیا تھا. کیا ہوا کہ آج حدیدہ کے پاس اتنی بڑی قوت اور طاقت ہے. اور یہ کس نوعیت کے لوگ ہیں جو اسکی حفاظت اور دفاع کر رہے ہیں. جو نہ پیچھے ھٹتے ہیں بلکہ بڑھ چڑھ کر حملہ کر کے دشمن کو بھاری نقصان پہنچا رہے ہیں. حدیدہ جو کچھ ہو رھا ہے وہ درحقیقت ایک معجزہ ہے.
یقین جانئے مجھے اتنی مقاومت کا اندازہ نہیں تھا. اور کسی بھی صحرائی علاقے پر اتنی مقاومت کی امید نہ تھی. دشمن کی کمر توڑ دینے کے لئے پہاڑی علاقوں پر اعتماد تھا. جہاں پر دشمن کی ناک زمین پر رگڑنے کا بہترین میدان ہو گا. لیکن آج حدیدہ نےکہا کہ چھوڑ دیں ان تجزئیات کو میرے دامن میں ایسے مرد مومن ہیں جو اللہ کے مجاہد اور انصار ہیں. اور بہادر عوام ہیں. 
بڑے مؤثر تجزیہ نگاروں کی تحلیل سے توار کی دھار کی خبر سچی ہے. انتظار کرو اور دیکھو.

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) پاکستان و ہندوستان میں شوال المکرم کا چاند نظرنہیں آیا دونوں ممالک میں عیدالفطر 16 جون بروز ہفتہ ہوگی۔

شوال کا چاند دیکھنے کے لیے مرکزی رویت ہلال کمیٹی کا اجلاس کراچی میں چیرمین مفتی منیب الرحمان کی زیر صدارت ہوا اور زونل کمیٹیوں کے اجلاس صوبائی دارالحکومتوں میں ہوئے، اس کے علاوہ دیگر ذرائع سے بھی چاند کی شہادتوں کا انتظار کیا جاتا رہا لیکن ملک بھر میں کہیں سے بھی چاند کی شہادت موصول نہیں ہوئی جس کے بعد عیدالفطر 16 جون بروز ہفتہ ہوگی۔

ادھر ہندوستان سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق جمعرات کے روزماہ شوال المکرم کا چاند دہلی کے علاوہ بنگال، بہار، آسام، آندھراپردیش، مدھیہ پردیش، راجستھان، ہریانہ اوراترانچل سے عدم رویت کی شہادتیں موصول ہوئیں۔ لہذا مرکزی رویت ہلال کمیٹی جامع مسجد دہلی کی طرف سے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ یکم شوال المکرم (عیدالفطر) 16؍جون 2018 ء ہفتہ کے روز ہے۔