پاکستانی شیعہ خبریں

شیعہ قتل عام اور شام پر حکومت پاکستان کے مؤقف میں تبدیلی کیخلاف ایم ڈبلیو ایم کے احتجاجی مظاہرے

 شیعہ نیوز (کراچی) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کراچی ڈویژن کے تحت جمعہ کے روز ملک بھر کی طرح کراچی بھر میں احتجاجی مظاہرے کئے گئے۔ احتجاجی مظاہروں کا مقصد پاکستان میں بڑھتی ہوئی دہشت گردی اور طالبان دہشت گردوں کا قلع قمع کرنے کے لئے حکومت سے مطالبے سمیت حالیہ دنوں سعودی عرب کی ایماء پر پاکستان کو شام کی جنگ میں دھکیلنے کی سازش کی مذمت کرنا تھا، اس حوالے سے کراچی کے مختلف علاقوں بشمول جامع مسجد حسینی برف خانہ ملیر، جامع مسجد مصطفی عباس ٹاؤن، جامع مسجد نور ایمان ناظم آباد، جامع مسجد جعفریہ نارتھ کراچی سمیت دیگر مقامات پر احتجاجی مظاہرے ہوئے جبکہ مرکزی احتجاجی مظاہرہ خوجہ مسجد کھارادر کے باہر ہوا۔ احتجاجی مظاہروں میں سینکڑوں مظاہرین نے شرکت کی جن کے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈز موجود تھے جس پر پاکستان شام کی جنگ میں نہ پڑے، سعودی ایماء پر پاکستان کو شام کی جنگ میں دھکیلنے کی مذمت کرتے ہیں، پاکستان کا دفاع کرتے رہیں گے، حکومت ہوش کے ناخن لے، طالبان دہشت گردوں کے خلاف وسیع پیمانے پر آپریشن کیا جائے سمیت مردہ باد امریکہ اور اسرائیل نا منظور کے نعرے درج تھے۔ شہر بھر میں ہونے والے احتجاجی مظاہروں سے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے صوبائی سیکرٹری سیاسیات علامہ عبد اللہ مطہری، مولانا منور نقوی، مولانا علی انور جعفری، علی حسین نقوی، انجینئر رضا نقوی، مولانا علی افضال، مولانا باقر زیدی مولانا ذوالفقار جعفری اور احسن عباس چانڈیو سمیت دیگر نے خطاب کیا۔
احتجاجی مظاہروں سے خطاب کرتے ہوئے مقررین کا کہنا تھا کہ پاکستان کو شام کی جنگی صورتحال میں دھکیلنا امریک اور اسرائیل کی گھناؤنی سازش ہے جسے سعودی عرب کے حکمران پاکستانی حکمرانوں کو لالچ دے کر پوری کروانے کی کوششیں کر رہے ہیں تاہم حکمرانوں کو چاہئیے کہ ہوش کے ناخن لیں اور پاکستان کے وسیع تر مفادات کی خاطر کسی بھی عرب یا دیگر ممالک کی ایماء پر شام کی جنگ میں کودنے سے خود کو دور رکھیں۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کے بیس کروڑ عوام کی زندگیوں اور مستقبل کو داؤ پر لگانے والے حکمرانوں کو چاہئے کہ وہ سعودی عرب کی ایماء پر شام سمیت کسی بھی ملک کے خلاف استعمال ہونے سے پہلے اپنے اندرونی دشمن طالبان دہشت گردوں کا قلع قمع کریں کیونکہ مستقبل قریب میں سعودی منصوبہ بندی کے تحت شام میں لڑنے والے باغی بھی پاکستان پہنچنا شروع ہو جائیں گے جو یقیناً پاکستان کے مفاد میں نہیں ہوگا۔
مقررین کا کہنا تھا کہ گذشتہ دنوں افواج پاکستان کی جانب سے طالبان دہشت گردوں کے ٹھکانوں پر کی جانے والی کاروائی پر افواج کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں اور سوال کرتے ہیں کہ افواج پاکستان اپنے جوانوں کے قتل کے انتقام کی خاطر تو طالبان دہشت گردوں کے خلاف فوری کاروائی عمل میں لاتی ہیں تاہم پاکستان کے عام عوام کو قتل کرنے والوں کے خلاف کون اٹھے گا؟ کیا پاکستان کے عوام اپنا دفاع خود کریں یا افواج پاکستان عوام کے قاتلوں کے خلاف بھی کاروائی عمل میں لائیں گی؟ مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے رہنماؤں نے مطالبہ کیا ہے کہ طالبان دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کا دائرہ کار وسیع کیا جائے اور طالبان دہشت گردوں کا قلع قمع کیا جائے۔ اس موقع پر مظاہرین نے امریکہ مردہ باد، اسرائیل نامنظور، دہشت گردی نامنظور، طالبان کے خلاف آپریشن کرو سمیت لبیک یا رسول اللہ (ص) اور لبیک یا حسین (ع) کے فلک شگاف نعرے بھی بلند کئے۔

Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button