سوشل میڈیا صارفین نے محمد بن سلمان کی پاکستان آمد کو مسترد کردیا

  • ہفتہ, 09 فروری 2019 17:44

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) سعودی عر ب کے ولیعہد شہزادہ محمد بن سلمان کی اگلے ہفتے پاکستان آمد متوقع ہے جسے پاکستانیوں نے ناپسندیدہ قرار دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سعودی ولیعہد محمد بن سلمان کی فروری کے درمیانی عشرے میں پاکستان آمد متوقع ہےجس میں وہ تاریخ کی سب سے بڑی سرمایہ کاری کرنے جارہے ہیں ۔ دنیا کے دیگر ممالک کی طرح پاکستانیوں نے بھی محمد بن سلمان سے ناپسندیدگی کا اظہار کیا ہے۔

 سوشل میڈیا پر پاکستانیوں کی جانب سے محمد بن سلمان کے سعودی ولیعہد بننے کے بعد سےدنیا بھر میں کیے جانے والے مظالم اور غیر اسلامی حرکات پرانہیں تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔سعودی صحافی جمال خاشقجی ، یمن میں ہزاروں بچوں کے قتل عام سمیت داعش کی حمایت و سرپرستی وہ عناوین ہیں جس پر محمد بن سلمان سے اظہار نفرت کیا جارہا ہے۔

 سوشل میڈیا کے ایک صارف نے لکھا ہے کہ سعودی شہزادے کی اتنی بڑی سرمایہ کاری کے پس پردہ مقاصد میں سے اہم ترین مقصد اسرائیل جیسی ظالم اور قابض ریاست کو تسلیم کرنا یا کم از کم اس سے کسی بھی سطح پر تعلقات قائم کرنا ہے۔اگر ایسا ہوتا ہے تو یہ بانیان پاکستان اور پاکستان کے بنیادی نظریات کی دھجیاں اڑانے کے مترادف ہوگا۔

ایک اور صارف نے لکھا ہے کہ اپنے ہی ملک کے صحافی کو بے دردی سے قتل کرنے اور اس کے ٹکڑے کرنے والے قصاب کو پاکستان میں ویلکم نہیں کیا جائے گا۔

عثمان نامی سوشل میڈیا صارف نے لکھا ہے کہ جس سرزمین پر کعبۃ اللہ ہے، رسول اکرم ﷺ  اور صحابہ کرام ؒ کے مزارات ہیں وہاں فحش گلوکاراؤں اور رقاصاؤں کی محفلیں کروا کر اور شراب سے بھرپور محفلیں سجاکر اسلامی مقدسات کی توہین کرنے والے کو نبی ﷺ کے غلاموں کی سرزمین پاکستان میں نہیں آنا چاہیے۔

واضح رہے کہ محمد بن سلمان نے ولی عہد بننے کے بعد سے اب تک اصحاب رسول کی سرزمین یمن پر بمباری کی جس میں عالمی اداروں کی رپورٹس کے مطابق اب تک ہزاروں بچے جاں بحق ہوچکے ہیں اس کے علاوہ مقدس سرزمین عراق پر حملہ کرنے والی داعش کی نہ صرف پشت بناہی کی بلکہ انہیں باقاعدہ مالی معاونت بھی فراہم کی۔ حال ہی میں صحافی جمال خاشقجی قتل کیس میں بھی اقوام متحدہ نے سعودی ولیعہد کو ذمہ دار قرار دیا ہے۔ اس کے علاوہ انبیاء کی سرزمین فلسطین پر قبضہ کرنے والی غاصب صیہونی ریاست اسرائیل سے قربتیں بڑھانے کے ساتھ ساتھ سعودی عرب کی فضائی حدود کو بھی اسرائیلی طیاروں کو استعمال کرنے کی اجازت دی ہے۔

Leave a comment

Make sure you enter all the required information, indicated by an asterisk (*). HTML code is not allowed.