دنیا

چین کے خلاف نئی امریکی پابندیاں

شیعہ نیوز:امریکی محکمہ خزانہ نے جمعہ کے روز چین، میانمار اور شمالی کوریا کے 25 افراد اور اداروں پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا بہانہ بنا کر پابندیاں عائد کر دیں۔

امریکی نائب وزیر خزانہ ویل ایڈیمو نے ایک بیان میں کہا، "انسانی حقوق کے عالمی دن پر، محکمہ خزانہ انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کے مرتکب افراد کے خلاف قانونی کارروائی کے لیے اپنے آلات استعمال کر رہا ہے۔”

امریکی محکمہ خزانہ نے چین کے مصنوعی ذہانت کے گروپ سینس ٹائم کو بھی اپنی ممنوعہ کمپنیوں کی فہرست میں شامل کر لیا۔

امریکی محکمہ خزانہ نے دعویٰ کیا کہ چینی کمپنی نے چہرے کی شناخت کا ایک پروگرام تیار کیا ہے جو مختلف نسلوں خصوصاً اویغوروں کی شناخت کر سکتا ہے۔

نئی امریکی پابندیوں میں دو چینی حکام کے نام بھی شامل ہیں۔ امریکی محکمہ خزانہ کا دعویٰ ہے کہ ان دونوں اہلکاروں نے عہدے پر رہتے ہوئے ایغور اقلیت کے خلاف کارروائی کی۔

امریکہ اور چین کے درمیان حالیہ مہینوں میں تناؤ بڑھ رہا ہے، تائیوان کے معاملے پر واشنگٹن اور بیجنگ کے درمیان بڑی کشیدگی ہے۔

بیجنگ تائیوان کو چین کا حصہ سمجھتا ہے، اور امریکی اقدام اور تائیوان کو اسلحے کی فروخت کو اس کی خودمختاری کی خلاف ورزی اور "ایک چین” پالیسی کے خلاف سمجھتا ہے۔ تاہم امریکہ آبنائے تائیوان میں بحری جہاز بھیج کر اور تائیوان کو فوجی مدد فراہم کر کے جزیرے کی موثر حمایت کر رہا ہے اور بیجنگ اس پر بارہا اعتراض کر چکا ہے۔ تاہم اقوام متحدہ کے رکن ممالک بشمول امریکہ خود تائیوان کو ایک آزاد ریاست کے طور پر تسلیم نہیں کرتے۔

Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button