مشرق وسطی

عراق سے امریکی فوجیوں کے مکمل انخلا کو یقینی بنانا چاہیے

شیعہ نیوز:عراقی قانون کی حکمرانی کے اتحاد کے ایک سینئر رکن نے کہا کہ ملک سے امریکی فوجیوں کا مکمل انخلاء کم سے کم تھا جو شہید جنرل قاسم سلیمانی اور شہید ابو مہدی المہندس کی شہادت کی برسی پر کیا جانا چاہئے۔

قانون کی حکمرانی کے لیے نوری المالکی اتحاد کے ایک سینیئر رکن حیدر اللامی نے کہا کہ کاظمی حکومت کو شہید جنرل قاسم سلیمانی اور شہید ابو مہدی المہندس کی شہادت کی برسی کے موقع پر عراق سے امریکی فوجیوں کے مکمل انخلا کو یقینی بنانا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ "کوئی بھی چیز ‘فتح کے رہنماؤں’ کی شہادت کی تلافی نہیں کر سکتی، اور عراق سے امریکی فوجیوں کا مکمل انخلا کم سے کم ہے جو کیا جانا چاہیے اور عراق میں ان کی مسلسل موجودگی کو کسی بھی صورت میں قبول نہیں کیا جانا چاہیے۔”

انہوں نے زور دے کر کہا کہ ابو مہدی المہندس نے اکیلے وزیر کے طور پر کام کیا، اس کا درجہ وزیر کا تھا، اور یہ کہ جو جرم ہوا وہ عراق کی خودمختاری کی صریح اور عظیم خلاف ورزی ہے۔

حیدر اللامی نے مزید کہا: "عراق کی دلچسپی یہ ہے کہ تمام عراقی شہروں بالخصوص بغداد میں شہداء قاسم سلیمانی اور ابو مہدی المہندس کے مجسمے اور یادگاریں نصب کی جائیں۔ عراق سے امریکی فوجیوں کا انخلا ان کے خون کا بدلہ ہو سکتا ہے۔

جنرل قاسم سلیمانی اور ابو مہدی المہندس کے قتل میں امریکی جرم کی دوسری برسی کے موقع پر عراقی شہر ان شہداء کی یاد میں مختلف تقریبات کا انعقاد کر رہے ہیں۔

آج بغداد اور تحریر اسکوائر پر امریکہ کے ہاتھوں الحشد الشعبی فورسز کی شہادت کی دوسری برسی کے موقع پر عراقیوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

یہ حملہ، جو 29 دسمبر 2019 کو شام کی سرحد کے قریب صوبہ الانبار کے القائم علاقے میں الحشد الشعبی فورسز کے ہیڈ کوارٹر پر ہوا، جس میں تقریباً 100 افراد ہلاک اور زخمی ہوئے۔

تقریب کے دوران مزاحمتی قائدین بالخصوص جنرل قاسم سلیمانی اور ابومہدی المہندس اور القائم کے شہداء کی تصاویر گاڑیوں پر آویزاں کی گئیں اور بغداد کے لوگ تحریر اسکوائر پر جمع ہو کر امریکہ اور امریکہ کے خلاف نعرے لگائے۔

Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button