پاکستانی شیعہ خبریں

مجلس وحدت مسلمین نے شہید علامہ آفتاب حیدر جعفری کے جلوس جنازہ پر رینجرز اور پولیس کی فائرنگ کی شدید مذمت کی ہے۔اس حملے میں دو شیعہ نوجوان شہید، ۲ زخمی

مجلس وحدت مسلمین سندھ کے رہنما علامہ مختار امامی نے مجلس وحدت کے رہنمااور ممتاز ذاکر اہلبیت (ع) شہید علامہ آفتاب حیدر جعفری کے جلوس جنازہ پر رینجرز اور پولیس کی فائرنگ کی شدید مذمت کی ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ پر امن جلوس جنازہ کے پر امن شرکاء پر بلاجواز فائرنگ کے نتیجے میں دو شیعہ نوجوان شہیداور ۲ زخمی ہو گئے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ نمائش چورنگی پر شہید کی نماز جنازہ کے بعد جلوس جنازہ براستہ لیاقت آباد وادی حسین(ع) قبرستان کی جانب رواں دواں تھا۔ جیسے ہی جلوس جنازہ کے شرکاء نے لبیک یا حسینؑ کے نعرے لگاتے ہوئے لیاقت آباد ڈاکخانہ کابس اسٹاپ کراس کیا ،پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری نے فائرنگ شروع کردی ۔ شدید فائرنگ کی زد میں آکر دو شیعہ نوجوان موقع پر ہی شہید ہوگئے ۔ ۲ دیگر نوجوان کے زخمی ہونے کی اطلاعات بھی موصول ہوئی ہیں۔
شہید نوجوانوں کی شناخت وسیم اور علی حسن کے نام سے ہوئی ہے۔ ایک زخمی کا نام فراز حیدر بتایا جاتا ہے۔ شہداء کی لاشوں کو پوسٹ مارٹم اور زخمیوں کو علاج کے لئے عباسی شہید ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔ علی حسن کا تعلق حسن کالونی ن ضلع وسطی سے ہے دوسرے شہید کا تعلق لانڈھی سے ہے۔ جلوس جنازہ پر فائرنگ کے نتیجے میں جلوس جنازہ کے شرکاء تھوڑی دیر تک رکے رہے۔ بعد ازاں جلوس جنازہ اپنی منزل کی جانب گامزن ہوا۔ سہراب گوٹھ کے نزدیک بھی جلوس جنازہ کے شرکاء پر رینجرز نے فائرنگ کی ۔
علامہ مختار امامی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ رینجرز اور پولیس میں شامل کالی بھیڑوں کو بے نقاب کیا جائے اور انہیں سزا دی جائے۔ انہوں نے کہا کہ یہ یکطرفہ حملہ تھا جس کا ثبوت یہ ہے کہ پولیس اور رینجرز کو کوئی نقصان نہیں پہنچا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button