مشرق وسطیہفتہ کی اہم خبریں

الحدیدہ ائیرپورٹ پر قبضے کی خبریں من گھڑت اور جھوٹی ہیں،

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) یمنی سرکاری فوج اور عوامی رضاکار فورسز کے ترجمان کا کہنا ہے کہ امریکی سعودی اتحادی افواج کے تمام تر حملے پسپا کردیے گئے ہیں اور الحدیدہ ائرپورٹن پر قبضے کی خبریں من گھڑت اور جھوٹی ہیں۔تسنیم خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق، یمنی سرکاری فوج اور عوامی رضاکار فورسز کے ترجمان نے تاکید کرتے ہوئے کہا ہے کہ الحدیدہ ائرپورٹ یمنی فورسز کے کنڑول میں ہے امریکی، سعودی اتحادی افواج کی جانب سے الحدیدہ ائیرپورٹ پر قبضے کی خبریں من گھڑت اور جھوٹی ہیں۔

یمنی فوج کے ترجمان شرف لقمان نے ذرائع ابلاغ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا امریکی سعودی اتحادی افواج کے ساتھ الحدیدہ سے 20 کلومیٹر دور جھڑپیں جاری ہیں۔انہوں نے کہا الحدیدہ ائرپورٹ جھڑپوں والی جگہ سے کافی فاصلے پر ہے تاہم امریکی سعودی اتحادی لڑاکا طیارے ائرپورٹ پر شدید بمباری کررہے ہیں، جس کے نتیجے میں ہوائی اڈے کا ڈھانچہ تباہ ہوا ہے۔دوسری طرف یمن کی عوامی تحریک انصار اللہ کے ایک اعلی عہدیدار ابراہیم العبیدی نے العالم ٹیلی ویژن سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ تین سیکٹروں، الفازہ، الجاح اور الدریہمی کی جانب سے سعودی اتحادی فوجیوں کا محاصرہ کر لیا گیا ہے اور بحری راستے کے سوا کمک رسانی کے تمام راستے منقطع کر دیئے گئے ہیں۔

انہوں نے یہ بات زور دے کر کہی کہ الحدیدہ کی جنگ دراصل یمن کے خلاف امریکہ اور برطانیہ کی جنگ ہے کیونکہ سعودی اتحاد میں ایسی کسی بھی جنگ کو چلانے کی صلاحیت نہیں ہے اور یہ جنگ طویل عرصے تک جاری رہے گی۔انصاراللہ کے ترجمان محمد عبدالسلام نے بھی اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ الدریہمی اور چند دوسرے علاقوں میں گھمسان کی جنگ جاری ہے اور دشمن کی فوجوں کو سامنے اور پیچھے دونوں جانب سے گھیر لیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ امریکی، برطانوی اور فرانسیسی بحری جہاز یمن کے ساحلوں پر شدید گولہ باری کر رہے ہیں اور یہ بات دشمن کے اخلاقی اور سماجی دیوالیہ پن کا ثبوت ہے۔خیال رہے کہ جارح سعودی فوجی اتحاد نے تیرہ جون سے الحدیدہ پر شدید حملوں کا آغاز کیا ہے جس کا مقصد انسانی امداد پہنچانے کے واحد راستے کو بند کرنا ہے۔سعودی اتحاد کو الحدیدہ کی جنگ میں یمنی فوج اور عوامی رضاکار فورس کی شدید مزاحمت کا سامنا ہے اور تاحال الحدیدہ پر قبضے کی تمام کوششیں ناکام ہوئی ہیں۔

Tags
Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close