اسلامی تحریکیںپاکستانی شیعہ خبریںہفتہ کی اہم خبریں

یورپی یونین کی طرح اسلامی یونین کی تشکیل ہمارا خواب ہے

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) عالمی ادارہ تقریب مذاہب اسلامی کے سربراہ آیت اللہ ڈاکٹر شہریاری نے ملی یکجہتی کونسل پاکستان کے زیراہتمام منعقدہ اتحاد امت کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یورپی یونین کی طرح اسلامی یونین کی تشکیل تقریب مذاہب اسلامی کا خواب ہے۔

آیت اللہ ڈاکٹر شہریاری نے کہا کہ یورپ میں مسیحیوں کے تین مذاہب، مختلف قومیں اور مختلف زبانیں بولنے والے آباد ہیں، اس کے باوجود وہاں پر ایک یونین کا قیام عمل میں لایا گیا ہے، یہی قومیں آپس میں عالمی جنگیں لڑ چکی ہیں۔ دوسری جنگ عظیم میں انھوں نے ساڑھے سات کروڑ سے زیادہ انسانوں کو قتل کیا ہے، لیکن آج ان کی ایک کرنسی اور ایک پارلیمنٹ ہے، وہ یکساں اقتصادی مفادات کے لیے اکٹھے ہیں۔ اسلامی ممالک بھی مختلف مسالک، قومیتوں اور زبانوں کے اختلاف کے باوجود ایسی ہی ایک یونین تشکیل دے سکتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار عالمی ادارہ تقریب مذاہب اسلامی کے سربراہ آیت اللہ ڈاکٹر شہریاری نے ملی یکجہتی کونسل پاکستان کے زیراہتمام منعقدہ اتحاد امت کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انھوں نے کہا کہ یورپ کے اتحاد کی وجہ دنیاوی مفادات اور معیشت ہے۔ مسلمانوں کے پاس اتحاد کا محور قرآن کریم اور رسالت مآب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ذات ہے۔ ڈاکٹر شہریاری نے کہا کہ ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم رسالت مآبؐ کے ساتھ ہوں۔ قرآن بھی والذین معہ کہتا ہے اور وہ ہم سے یہی چاہتا ہے کہ ہم رسولؐ اللہ کے ساتھ ہوں۔ سب مل کر ان کا دامن تھام لیں۔ ڈاکٹر شہریاری نے ملی یکجہتی کونسل کی اتحاد امت کی کاوشوں کو سراہا۔ انھوں نے کہا کہ سامراجی قوتیں اتحاد امت کے خلاف ہیں اور اس سلسلے میں مختلف حیلے بہانے تراشتی رہتی ہیں۔

یہ خبر بھی پڑھیں روسی صدر کا بیان خوش آئند،آزادی اظہار اور اہانت میں تمیز کرنا لازم ہے

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ملی یکجہتی کونسل پاکستان کے سربراہ صاحبزادہ ابو الخیر محمد زبیر نے کہا کہ اس وقت اہم ترین کام اتحاد امت ہے۔ ملی یکجہتی کونسل اور ادارہ تقریب مذاہب اسلامی یہی کام انجام دے رہے ہیں۔ جو بھی شخص اتحاد کو ختم کرنے کی کوشش کرے، وہ دشمن کا آلہ کار اور قابل نفرت ہے۔ فلسطین، روہنگیا، ہندوستان، یمن اور کشمیر میں مسلمانوں پر ظلم ہو رہا ہے۔ ایران کے علاوہ کسی اسلامی ملک نے کشمیر کے لیے آواز نہیں اٹھائی۔ صاحبزادہ ابو الخیر محمد زبیر نے مزید کہا کہ اسرائیل کی فضائیہ کے سربراہ کو کیسے جرأت ہوئی کہ وہ ایران پر حملے کی دھمکی دے۔ ان سب سازشوں کا مقابلہ اتحاد سے ہی ممکن ہے۔

ایران کی رہبر کونسل کے رکن مولانا نذیر احمد سلامی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملی یکجہتی کونسل ایک نعمت عظمیٰ ہے۔ کونسل کی کوششوں سے پاکستان میں ہم آہنگی کی فضا کو فروغ ملا ہے۔ انھوں نے کہا کہ بیالیس سال پہلے پاکستان میں بالکل اور طرح کی صورت حال تھی۔ اب جو اتحاد کی فضا اس کونسل کی کوششوں سے دکھائی دے رہی ہے، اس سے میرا دل بہت خوش ہوا ہے۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اسلامی جمہوریہ ایران کے سفیر سید محمد علی حسینی نے کہا کہ تقریب و وحدت ہمیشہ کی ضرورت ہے۔ سید محمد علی حسینی نے حکومت پاکستان اور عمران خان کی اسلامی مقدسات کے تحفظ کے حوالے سے کوششوں کو سراہا۔

کونسل کے سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر اور فلسطین کے لیے ایران کی کوششیں قابل قدر ہیں۔ تقریب سے مجلس وحدت مسلمین کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس، اسلامی تحریک پاکستان کے نائب صدر علامہ عارف حسین واحدی، جماعت اہل حرم کے سربراہ مفتی گلزار احمد نعیمی، جماعت اسلامی کے ایم این اے عبدالا کبرچترالی، جماعت اسلامی کے نائب امیر میاں محمد اسلم، اسلامی تحریک کے سیکرٹری جنرل علامہ شبیر حسن میثمی، ملی یکجہتی کونسل شمالی پنجاب کے صدر ڈاکٹر طارق سلیم، جماعت اہل حدیث کے سیف اللہ خالد، تنظیم اسلامی کے راہنما قاری ضمیر اختر، جامعۃ المصطفیٰ کے ڈائریکٹر اور وفاق المدارس شیعہ کے سیکرٹری جنرل علامہ انیس الحسنین خان اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔

یہ خبر بھی پڑھیں شہید قاسم سلیمانی استقامتی محاذ کے دل کی دھڑکن

اس کانفرنس میں کونسل میں شامل جماعتوں کے مرکزی اور صوبائی قائدین کی ایک بڑی تعداد بھی شریک تھی۔ کانفرنس کی نظامت کے فرائض کونسل کے سیکرٹری جنرل جناب لیاقت بلوچ نے انجام دیئے، جبکہ ترجمانی کی ذمہ داری کونسل کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل ثاقب اکبر کے سپرد تھی۔ اختتامی دعا امت واحدہ کے سربراہ علامہ محمد امین شہیدی نے کروائی۔ اس اجلاس میں سول سوسائٹی اور میڈیا کے اراکین کی بھی ایک بڑی تعداد موجود تھی۔

Tags

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button