مشرق وسطی

غزہ پر عسکری جارحیت نے مغرب کی منافقت کو آشکار کردیا، یمن

شیعہ نیوز: یمن کی قومی نجات حکومت کے وزیراعظم "عبدالعزیز بن حبتور” نے کہا کہ غزہ پر فوجی جارحیت نے مغربی دعووں کی قلعی کھول دی۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار صنعاء میں قومی نجات حکومت کی وزارت انسانی حقوق کے اجلاس میں کیا۔ اس موقع پر عبدالعزیز بن حبتور نے کہا کہ غزہ کی پٹی پر صیہونی رژیم کی جارحیت نے مغرب کے دوغلے اخلاقی اور انسانی معیارات کو واضح کر دیا۔ نیز مغرب کے انسانی حقوق اور بین الاقوامی انسانی حقوق کے بارے میں مبینہ خیالات کو بھی ظاہر کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ اور نیٹو نے غزہ پر صیہونی رژیم کی جارحیت کی حمایت کرتے ہوئے جنگ کو علاقائی سطح سے عالمی سطح پر منتقل کر دیا۔ یمن کی قومی حکومت کے سربراہ نے امت عربیہ و اسلامیہ پر مسلط کی جانے والی جنگ میں یمن کے موثر کردار کو اجاگر کرنے کے لئے ذرائع ابلاغ کی سرگرمیوں کو تیز کرنے پر زور دیا۔

واضح رہے کہ غزہ پر صیہونی جارحیت کے آغاز سے ہی یمنی فورسز نے فلسطینی عوام کی حمایت کرتے ہوئے مقبوضۃ سرزمین جانے والے اور صیہونی بحری جہازوں کو باب المندب و بحیرہ احمر میں نشانہ بنانا شروع کر دیا۔ یمنی فورسز نے اس عزم کا اظہار کیا کہ جب تک اسرائیل، غزہ پر اپنی جارحیت بند نہیں کرتا ہم اس وقت تک صیہونی بحری جہازوں کو نشانہ بناتے رہیں گے۔ یمن کی مسلح افواج نے اس بات پر زور دیا کہ خلیج عدن اور بحیرہ احمر میں اسرائیل، برطانیہ اور امریکہ کے علاوہ تمام ممالک کو آزادانہ بحری نقل و حرکت حاصل ہے۔ یاد رہے کہ امریکہ و برطانیہ نے بین الاقوامی بحری نقل و حرکت کے تحفظ کو بہانہ بناتے ہوئے یمنی فورسز کے ٹھکانوں کو نشانہ بھی بنایا۔ لیکن بین الاقوامی ماہرین کے مطابق اِن حملوں کا کوئی فائدہ نہیں کیونکہ اس سے بحیرہ احمر میں اسرائیلی بحری جہازوں کی آمد و رفت بحال نہیں ہو سکے گی۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button