اسلامی تحریکیںپاکستانی شیعہ خبریںہفتہ کی اہم خبریں

اسلام میں نصیریت کا کوئی تصور نہیں، سبطین سبزواری

قرآن و حدیث سے حکم الٰہی تلاش کرنے کا نام اجتہاد ہے۔ تقلید صرف مجتہد ہی کی جا سکتی ہے، کسی جاہل کی نہیں

شیعہ نیوز (پاکستانی شیعہ خبر رساں ادارہ) شیعہ علماء کونسل شمالی پنجاب کے صدر علامہ سید سبطین حیدر سبزواری نے کہا ہے کہ علماء انبیاء کے وارث ہیں، اسلام میں رہبانیت، نصیریت اور غالیت کا کوئی تصور نہیںہے۔

علامہ سبطین سبزواری کا کہنا تھا کہ مکتب تشیع اسلام کا واضح اور روشن چہرہ ہے، جو پیغمبر اکرم کی ختم نبوت کے بعد آئمہ اہلبیت کے ذریعے ہم تک پہنچا، ختم نبوت کے بعد سلسلہ امامت و ولایت شروع ہوا۔ غیبت کبریٰ کے بعد سے امام زمانہ امام مہدیؑ کی نیابت علماء ادا کر رہے ہیں، جنہوں نے تعلیمات اہلبیتؑ کو عوام تک پہنچایا، علم و عمل کا یہ کارواں علامہ یعقوب کلینی ؒسے آیت اللہ روح اللہ خمینی ؒسے ہوتا ہوا اب تک جاری ہے۔

انہوں نے کہا کہ قرآن و حدیث سے حکم الٰہی تلاش کرنے کا نام اجتہاد ہے۔ تقلید صرف مجتہد ہی کی جا سکتی ہے، کسی جاہل کی نہیں۔ حوزہ ہائے علمیہ کی معاشرے میں خدمات کو فراموش نہیں کیا جا سکتا۔ مکتبہ اہل بیت ؑکے مراکز نجف، کربلا، کاظمین، سامرہ، قم المقدس اور لکھنو رہے ہیں جبکہ شیخ مفید ؒ، شیخ صدوق ؒ، علامہ حلی ؒ، شیخ مقدسیؒ، سید مرتضٰی ؒ، شہید اول، شہید ثانی جیسے علماء نے مکتب اہلبیتؑ کیلئے زندگیاں وقف کر دیں۔

انہوں نے مزیدکہا کہ آیت اللہ بروجردی، آیت اللہ حائری، آیت اللہ رضا گلپائیگانی، مکارم شیرازی، عبداللہ شیرازی جیسی نامور شخصیات نے بھی تعلیمات اہل بیت اطہار کو فروغ دینے کی بڑی کوشش کی۔ علماء کیخلاف سازشیں مکتب اہل بیت کو ختم نہیں کرسکتیں۔ علماء کی اہمیت سے انکار کوئی جاہل ہی کرسکتا ہے۔ دین کیا ہے؟ قرآن کیسے پڑھا جائے، حدیث کیا ہے؟ سیرت اہلبیت کیا ہے؟ نکاح، طلاق، جنازہ اور دیگر روزمرہ زندگی کے معاملات سب علماء ہی نے بتائے اور سکھائے۔ علماء کی اہمیت سے انکار کرنیوالے بتائیں کہ ان کے علماء کون ہیں؟ دین علماء سکھائیں گے یا جاہل گلوکار، قوال اور پیشہ ور مقرر، جنہیں اعراب کے ساتھ قرآن مجید تک پڑھنا نہیں آتا۔

شیعہ علماء کونسل کے رہنماء نے کہا کہ علامہ گلاب علی شاہ، قبلہ یار محمد شاہ، علامہ حسین بخش جاڑا، مولانا صفدر حسین نجفی، آیت اللہ شیخ محمد حسین نجفی نے پاکستان میں جبکہ لکھنو کے علامہ سید علی نقی نقن نے برصغیر میں اہم کردار ادا کیا۔

Tags
Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close